gham shayari – gham poetry in urdu

gham means sorrow, in this article read gham poetry in urdu, gham shayari urdu. Afsos, ranj and aazurdagi are also synonames of gham.

اگر وہ پوچھ لیں ہم سے، تمھیں کِس بات کا غم ہے

تو پھر کِس بات کا غم ہے اگر وہ پوچھ لیں ہم سے

agar wo puch lain ham say tumhain kis baat ka gham hai

tu phir kis baat ka gham hai agar wo puch lain ham say

gham shayari urdu

میری قسمت میں غم گر اِتنا تھا

دِل بھی یارب کئی دئیے ہوتے

Meri qismat main gham gar itna tha

Dil bhi ya rab kai diye hotay

غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں

تو نے مٌجھ کو کھو دِیا ہے، میں نے تٌجھے کھویا نہیں

gham ki barish nay bhi tery naqsh ko dhoya nahi

tu nay mujh ko kho diya ha, main nay tujhy khoya nahi

یہی ہے ذوقِ عِبادت کی اِنتہا ساغرؔ

غَمِ حیات کے ماروں کا احترام کرو

Advertisement

yahi hai zauq e ibadat ki intiha sagher

gham e hayat kay maron ka ehtram karo

لوگ سَر پھوڑ کر بھی دیکھ چٌکے

غم کی دیوار ٹوٹتی ہی نہیں

log sar phorr kar bhi dekh chuky

gham ki dewar tut-tti hi nahi

چاند کے ساتھ کئی درد پرانے نکلے

کِتنے غم تھے جو تیرے غم کے بہانے نکلے

chand kay sath kai dard purany niklay

kitnay gham thay jo tery gham kay bahany niklay

gham poetry in urdu

تمھارا غم نہیں کافی ہمارا دِل جلانے کو

نئےکچھ روگ پالیں گے پرانے دکھ بھلانے کو

tumhara gham nahi kafi hamara dil jalany ko

naye kuch rog palain gain purany dukh bhulany ko

سٌنا غم جٌداٸ کا اٌٹھاتے ہیں لوگ

جانے زندگی کیسے بِتاتے ہیں لوگ

suna gham judai ka uthaty hain log

jany zindagi kesy bitatay hain log

آتا ہے کون کون تیرے غم کو بانٹنے

زاہدؔ تو اپنی موت کی افواہ اٌڑا کے دیکھ

aata hai kon kon tery gham ko bantny

zahid tu apni maut ki afwa urra kay dekh

اٌس کے سینے میں ایسا کیا غم ہے

اس کے لب سے ہنسی نہیں جاتی

uss kay seenay main aisa kiya gham hai

uss kay lab say hansi nahi jati

ایسا نہیں ہے کہ غم نے بڑھا لی ہو اپنی عٌمر

موسم خوشی کا وقت سے پہلے گزر گیا

aisa nahi hai keh gham nay barrha li ho apni umer

mausam khushi ka waqt say pehly guzer giya

قبر میں بھی نہ بٌجھی آتشِ غم واۓ نصیب

ہم جہاں دفن ہیں واں زیرِ زمیں آب نہیں

qabar main bhi na bhujhi aatish e gham waey naseeb

ham jahan dafan hain waan zer e zameen aab nahi

غمِ زندگی نے کٌچھ ایسی تلخیاں بھی دیں

خوشی کا وقت بھی آیا مگر مسکرا نہ سکے

gham e zindagi nay kuch aisi talkhiyan bhi diin

khushi ka waqt bhi aaya magar muskura na sakay

میں تو قائم ہوں تیرے غم کی بدولت ورنہ

یوں بِکھر جاٶں کہ خود ہاتھ نہ آٶں اپنے

main tu qaim hoon tery gham ki badolat warna

youn bikhar jaon k khud haath na aaon apnay

read more

thanx for free image download

https://www.istockphoto.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: