khuli jo aankh to wo tha na wo zamana tha

ghazal khuli jo aankh to wo tha na wo zamana tha

کھُلی جو آنکھ تو وہ تھا ، نہ وہ زمانہ تھا

دہکتی آگ تھی تنہائی تھی فسانہ تھا

غموں نے بانٹ لیا ہے مٌجھے یوں آپس میں

کہ جیسے میں کوئی لٌوٹا ہوا خزانہ تھا

جٌدا ہے شاخ سے گٌل رٌت سےآشیانے سے

کَلی کا جٌرم گھڑی بھر کا مٌسکرانا تھا

یہ کیا کہ چند ہی قدموں پہ تھک کے بیٹھ گٕے

اِنھیں تو ساتھ میرا دٌور تک نِبھانا تھا

مٌجھے جو میرے لہوٌ میں ڈبو کے گٌزرا ہے

Advertisement

وہ کوئی غیر نہیں یار اِک پٌرانا تھا

خود اپنے ہاتھ سے شہزادؔ اٌس کو کاٹ دِیا

کہ جِس درخت کی ٹہنی پہ آشیانہ تھا

khuli jo aankh to wo tha na
ghazal khuli jo aankh to wo tha na wo zamana tha

lyrics khuli jo aankh to wo tha na wo zamana tha

khuli jo aank tu wo tha, na wo zamana tha

dehakti aag thi tanhai thi fasana tha

ghamon nay bant liya hai mujhy youn aapas main

keh jaisay main koi loota hua khazana tha

juda hai shakh say gul ruut say aashiyanay say

kali ka jurm gharri bhar ka muskurana tha

yeh kiya keh chand hi qadmon pay thak kay beth gaye

inhain tu sath mera dur tak nibhana tha

mujhy jo mery laho main dabo gaiy guzra hai

wo koi gher nahi yaar ik purana tha

khud apnay hath saiy shehzad uss ko kaat diya

keh jis darakht ki tehni pay aashiyana tha

read more

thanx for free image download

https://www.dreamstime.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: