murshid poetry in urdu 2 lines|afkar alvi poetry in urdu

read murshid poetry in urdu 2 lines and afkar alvi poetry in urdu best. Murshid is an Arabic word meaning having integrity, mature, faqir, dervish. This word is also used for a spiritual teacher.

مُرشِدّ ! میں جَل رہا ہوں ، ہوائیں نہ دیجیے    

 مُرشِدّ ! ازالہ کیجے ، دُعائیں نہ دیجیے

murshad main jal raha hoon, hawain na dejye

murshad azala kijye, duain na dejyey

murshid poetry in urdu 2 lines and afkar alvi poetry in urdu
murshid poetry in urdu 2 lines and afkar alvi poetry in urdu

murshid poetry in urdu 2 lines, and afkar alvi poetry in urdu part 1

مُرشِدّ پلیز آج مُجھے وقت دیجئے

murshed please aaj mujhay waqt dejye
مُرشِدّ میں آج آپ کو دُکھڑے سنُاؤں گا
مُرشِدّ ہمارے ساتھ بڑا ظُلم ہو گیا!

murshed main aaj aap ko dukhrray sunnaon ga

murshed hamaray sath barra zulm ho giya
مُرشِدّ ہمارے دیس میں اِک جَنگ چِھڑ گئی
مُرشِدّ سَبھی شریف شَرافت سے مَر گئے

murshed hamaray desh main ik jang chirr gai

murshid sabhi sharif sharafat say marr gaye
مُرشِدّ ہمارے ذہن گرفتار ہو گئے
مُرشِدّ ہماری سوچ بھی بازاری ہو گئی

murshed hamaray zehan giraftar ho gaye

murshed hamari soch bhi bazari ho gai
مُرشِدّ بہت سے مار کے ہم خود بھی مَر گئے
مُرشِدّ ہمیں زرّہ نہیں تَلوار دی گئی

murshed buhat say marr kay ham khud bhi marr gaye

murshed hamain zirrah nahi talwar dii gai
مُرشِدّ ہماری ذات پہ بُہتان چڑھ گئے
مُرشِدّ ہماری ذات پلندوں میں دَب گئی

murshid hamari zaat pay buhtan charr gaye

murshed hamari zaat palandon main daab gai

murshed hamaray wastay bass ik shakhs tha - murshid poetry in urdu
murshed hamaray wastay bass ik shakhs tha – murshid poetry in urdu


مُرشِدّ ہمارے واسطے بَس ایک شخص تھا
مُرشِدّ وہ ایک شخص بھی تَقدیر لے اُڑی

murshed hamaray wastay bass ik shakhs tha

murshed wo ik shakhs bhi taqdeer lay urri
مُرشِدّ خُدّا کی ذات پہ اَندھا یقین تھا
اَفسوس اب یقین بھی اَندھا نہیں رہا

murshed khuda ki zaat pay andha yaqeen tha

afsos ab yaqeen bhi andha nahi raha
مُرشِدّ محبّتوں کے نتَائج کہاں گئے
مُرشِدّ میری تو زِندگی بَرباد ہو گئی

murshed muhabatton kay nitaij kahan gaye

murshed meri tu zindagi barbad ho gai
مُرشِدّ ہمارے گاؤں کے بچوں نے بھی کہا
مُرشِدّ کوں آکھیں آ کے ساڈا حال ڈیکھ وَنج

murshed hamaray gaon kay bachon nay bhi kaha

murshed ku aakhin aa kay sada haal dekh wanj
مُرشِدّ ہمارا کوئی نہیں ، ایک آپ ہیں
یہ میں بھی جانتا ہوں کہ اَچھّا نہیں ہوا

murshed hamara koi nahi ik aap hain

yeh main bhi janta hoon keh acha nahi huwa
مُرشِدّ ! میں جَل رہا ہوں ، ہوائیں نہ دیجیے
مُرشِدّ ! ازالہ کیجے ، دُعائیں نہ دیجیے

murshed main jal raha hoon hawain na dejye

murshed azala kijye duain na deejye

murshid poetry in urdu دوسرا حصہ 

murshid main rona rotay huway andha ho giya - murshid poetry in urdu
murshid main rona rotay huway andha ho giya – murshid poetry in urdu

مُرشِدّ میں رونا روتے ہوئے اَندھا ہو گیا

اور آپ ہیں کہ آپ کو احساس تک نہیں

murshid main rona rotay huway andha ho giya

aur aap hain kay aap ko ehsas tak nahi

ہے ،صبر کیجے صبر کا پھل میٹھا ہوتا ہے 

مُرشِدّ میں بھونکدا ہاں جو کئی شئے وی نئیں بچی

hai sabar kijye sabar ka phal meetha hota hai

murshed main bhonkda han jo kai sahy vi nahi bachi

مُرشِدّ وہاں یزیدیت آگے نکل گئی

اور پارسا نماز کے پیچھے پڑے رہے

mursad wahan yazeediyat aagay nikal gai

aur parsa nimaz kay peechay parray rahay

مُرشِدّ کسی کے ہاتھ میں سب کچھ تو ہے ، مگر

مُرشِدّ کسی کے ہاتھ میں کچھ بھی نہیں رہا

murshad kisi kay hath main sab kuch tu hai magar

murshad kisi kay hath main kuch bhi nahi raha

مُرشِدّ میں لڑ نہیں سکا ، پر چیختا رہا

خاموش رہ کے ظلم کا حامی نہیں بنا

murshad main larr nahi saka par cheekhta raha

khamosh reh kay zalim ka hami nahi bana

مُرشِدّ ! جو میرے یار ، بَھلا چھوڑیں، رہنے دیں

اچھے تھے جیسے بھی تھے خدا اُن کو خوش رکھے

murshid jo meray yaar, bhala chorrain, rehnay dain

achay thay jaisay bhi khuda un ko khush rakhay

مُرشِدّ ! ہماری رونقیں دوری نگل گئی

مُرشِدّ ! ہماری دوستی شبہات کھا گئے

murshed hamari ronaqain dori nigal gai

murshid hamari dosti shubhat kha gaye

مُرشِدّ ! اے فوٹو پچھلے مہینے چھکایا ہم

ہنڑ میکوں ڈیکھ ! لگدئے جو اے فوٹو میڈا ھ ؟

murshad aye photo pechalay mahinay chikaya ham

hun mekon dekh lagda ay jo ay photo meda hai

یہ کس نے کھیل کھیل میں سب کچھ الٹ دیا

مُرشِدّ یہ کیا کہ مر کے ہمیں زندگی ملے

yeh kis nay khel khel main sab kuch ulat diya

murshed yeh kiya keh mar kay hamain zindagi milay

مُرشِدّ ! ہمارے ورثے میں کچھ بھی نہیں ، سو ہم

بے موسمی وفات کا دکھ چھوڑ جائینگے

murshid hamaray wirsay main kuch bhi nahi so ham

bay mausami wafat ka dukh chorr jain gaiy

murshid kisi ki zaat say koi gila nahi - murshid poetry in urdu
murshid kisi ki zaat say koi gila nahi – murshid poetry in urdu

مُرشِدّ کسی کی ذات سے کوئی گلہ نہیں

اپنا نصیب اپنی خرابی سے مر گیا

murshid kisi ki zaat say koi gila nahi

apna naseeb apni khrabi say mar giya

مُرشِدّ وہ جس کے ہاتھ میں ہر ایک چیز ہے

شاید ہمارے ساتھ وہی ہاتھ کر گیا

murshid wo jis kay hath main har ik cheez hai

shayad hamary sath wahhi hath kar giya

تیسرا حصہ

مُرشِدّ ! دعائیں چھوڑ ، ترا پول کھل گیا

تو بھی مری طرح ہے ، ترے بس میں کچھ نہیں

murshid suain chorr tera pol khul giya

tu bhi meri tarah hai teray bas main kuch nahi

انسان میرا درد سمجھ سکتے ہی نہیں

میں اپنے سارے زخم خدا کو دکھاؤں گا

insan mera dard samajh saktay hi nahi

main apnay saray zakhm khud ko dikhaoon ga

اے ربِ کائنات ! ادھر دیکھ ، میں فقیر

جو تیری سر پرستی میں برباد ہو گیا

aye rabb e kainat idhar dekh mein faqeer

jo teri sarparasti main barbad ho giya

پروردگار ! بول ، کہاں جائیں تیرے لوگ

تجھ تک پہنچنے کو بھی وسیلہ ضروری ہے

parwardigar bol kahan jain teray log

tujh tak puhanchnay ko bhi waseela zarori hai

پروردگار ! آوے کا آوا بگڑ گیا

یہ کس کو تیرے دین کے ٹھیکے دیے گئے

parwardigar aaway ka aawa bigarr giya

yeh kis ko teray din kay thekay diyae gaye

پروردگار ! ظلم پہ پرچم نِگوں کیا

ہر سانحے پہ صرف ترانے لکھے گئے

parwardigar zulm pay parcham nigon kiya

har sanhay pay sirf taranay likhay gaye

ہر شخص اپنے باپ کے فرقے میں بند ہے

پروردگار ! تیرے صحیفے نہیں کھلے

har shakhs apnay baap kay firqay main band hai

parwardigar teray sahifay nahi khulay

کچھ اور بھیج ! تیرے گزشتہ صحیفوں سے

مقصد ہی حل ہوئے ہیں ، مسائل نہیں ہوئے

kuch aur bhej teray guzashta sahifon say

maqsad hi haal huway hain masail nahi huway

جو ہو گیا سو ہو گیا ، اب مختیاری چھین

پرودگار ! اپنے خلیفے کو رسی ڈال

jo ho giya su ho giya ab mukhtiyari cheen

parwardigar apnay khaleefay ko rasi daal

جو تیرے پاس وقت سے پہلے پہنچ گئے

پروردگار ! انکے مسائل کا حل نکال

jo teray pass waqt say pehlay puhanch gaye

parwardigar unkay masail ka hal nikal

پروردگار ! صرف بنا دینا کافی نہیں 

تخلیق کر کے بھیج تو پھر دیکھ بھال کر

parwardigar sirf bana dena kafi nahi

takhleeq kar kay bhej tu phir dekh bhaal kar

ہم لوگ تیری کن کا بھرم رکھنے آئے ہیں

پروردگار ! یار ، ہمارا خیال کر

ham log teri kun ka bharam rakhnay aaye hain

parwardigar yaar hamara khiyal kar

afkar alvi, murshid poetry in urdu

murshid poetry in urdu

murshid say kaha dard e muhabbat ki dawa do
murshid say kaha dard e muhabbat ki dawa do

مُرشد سے کہا دردِ مُحبّت کی دوا دو

حضرت نے مُسکراکے کہا اور مُحبت

murshid say kaha dard e muhabbat ki dawa do

hazrat nay muskura kay kaha aur muhabbat

مُرشِد اُن واسطے تماشا تھا

مُرشِد اِدھر زندگی تباہ ہو گئی

murshid un wastay tamasha tha

murshid idhar zindagi tabbah ho gai

ہم جیسے بیکار لوگ — ہائے مرشد

روٹھ بھی جائیں تو کوئی منانے نہیں آتا

ham jaisy bekar log — haiy murshid

ruth bhi jain tu koi manany nahi aata

read more

thanx for free image download

https://unsplash.com/





Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: