14 august poetry for Independence Day

read 14 august poetry for Independence Day.

خٌدا کَرے میری ارضِ پاک پہ اٌترے

وہ فصّلِ گٌل جِسے اندیشہِ زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھِلے وہ کھِلا رہے صدیوں

یہاں خزاں کو بھی گٌزرنے کی مجال نہ ہو

khuda karay meri Arz-e-Pak pay utray

wo fasal e gul jisay andesha e zawal na ho

yahan jo phool khilay vo khila rahay saddyoun

yahan khizan ko bhi guzarnay ki majal na ho

14 august poetry

اے ارضِ وطن آج بھی اپنا یہ عہد ہے

ہم حرفِ وفا خون سے تحریر کریں گے

ham harf e wafa khon say tehreer karain gaiy
ham harf e wafa khon say tehreer karain gaiy

aye arz e watan aaj bhi apna yeh ehad hai

ham harf e wafa khon say tehreer karain gaiy

مَرتے ہیں اٹھتے ہیں اور جھٌکتے نہیں

اے میرے وطن تیرے یہ لال بِکتے نہیں

martay hain uthtay hain aur jhuktay nahi

aye mery watan tery ye lal biktay nahi

ہم اپنی سانسیں تیرے نام کرتے ہیں

اے وطن ہم تیری عظمت کو سلام کرتے ہیں

ham apni sansain teray naam kartay hain

aye watan teri azmat ko salam kartay hain

نظر بٌری ڈالی اگر تٌم نے میری ارضِ پاک پر

میرا وعدہ ہے اے دٌشمن، تیری ہستی مِٹا دیں گے

nazar burrri daali agar tum nay meri arz e pak par

mera wada hai aye dushman teri hasti mita dain gaiy

ہماری خاک سے خوشبو وطن کی آۓگی

ہمارا خون ہے شامل اِس وطن کی مٹی میں

hamari khak say khushboo watan ki aaye gi

hamara khon hai shamil iss watan ki miti main

ہے جٌرم اگر وطن کی مِٹی سے مٌحبّت

یہ جٌرم سدّا میرے حسابوں میں رہے گا

hai jurm agar watan ki mitti say muhabbat

yeh jurm sada mery hisabon main rahy ga

قبروں میں نہیں ہم کو کِتابوں میں اٌتارو

ہم لوگ مٌحبّت کی کہانی میں مَرے ہیں

qabaron main nahi ham ko kitabon main uttaro

ham log muhabbat ki kahani main maray hain

read more

thanx for free image

https://wallpaperaccess.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: