suna hai log usay aankh bhar ke dekhtay haan

read Suna Hai Log Usay Aankh Bhar Ke —

A tremendous example of romantic poetry and love poetry. Here you can see full lyrics of ghazal.

Ghazal full Lyrics

Suna Hai Log Usay aankh bhar ke dekhte han

tu iss ke shehr main kuch din thehr ke dekhty han

Suna Ha Rabt Hay Usko Kharab Halun Se
So Apne Aapp Ko Barbad Karke Dekhtte Han

Suna Ha Dard Ki Ga-Hak Hai Chashm-e-Naz Uski
So Ham Bhi Uski Gali Se Guzar Ker Dakhty Han

Suna Hai Usko Bhi Hai Sheir-O-Sheri Se Shaghf
So Ham Bhi Mujze Apne Hunar Ke Dekhty Hayn

Suna Hay Boly Tu Batoon Sy Phool Jharty Hain
Yeh Batt Hay To Chalo Batt Kar Ke Dekhty Hain

Suna Hai Ratt Usy Chand Takta Rehta Hay
Sitare Bam e Falak Sy Utar Kay Dekhty Hain

Suna Hai Log Usay ——-

  • Suna Hay Din Ko Usy Titliyan Satati Hain
  • Sunaa Hai Raat Ko Jugnu Thaher Ky Dekhty Hain
  • Suna Hai Hashr Hain Uski Ghazl Si Aankhain
  • Sunaa Hai Usko Hiran Dasht Bhar Ky Dekhty Hain
  • Sunaa Hay Uski Siyah Chashmagi Qayamet Hay
  • So Usko Surma Frosh Ankh Bher Kay Dekhty Hain
  • Suna Hai Uske Labon Se Gulab Jalte Hain
  • So Ham Baharh Pe elzaam Dher Ky Dekhty Hain
  • Suna Hai Aina Tamasil Hay Jabeen Us ki
  • Jo Sada Dil Hai Usy Ban Sanwaar Kay Dekhtay Hain

Suna Hai Log Usay ——

Suna Hai Usky Badan Ky Tarash Aisy Hain
Ky Phool Apni Qabaein Kater Ke Dekhty Hain

Suna Hai Uski Shabistan Sy Mutt a sil Hay Bahishtt
Makeen Udher Ky Bhi Jalwe Idher Ky Dekhty Hain

Ruky Toh Gardishain Uska Tavaf Karti Hain
Chale Tu Usko Zamany Thahr Ke Dekhty Hain

Kahaniyan He Sahi Sab Mubalghe He Sahi
Agar Wo Khawab Hay Tu Taabeer Kar Ky Dekhty Han

Ab Usake Sheher Mein Thehrain Ky Kuch Kar Jain
“Faraz” aoo Sitary Safar Ky Dekhte Hain

Suna Hai Log Usay aank bhar ke dekhte han

suna ha log usay ankh bhar ke dekhty han – ahmad faraz

Urdu lyrics Ghazal suna hay log usay

suna ha log usay aankh bhar kay ghazal full lyrics - besturdupoetry.pk
suna ha log usay aankh bhar kay ghazal full lyrics – besturdupoetry.pk
  • سُنا ہے لوگ اُسے آنكھ بھر كے دیكھتے ہی          تو اس کے شہر میں‌کچھ دن ٹھہر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے رَبط ہے اس کو خَراب حالوں سے                        سو اپنے آپ کو برباد کرکے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے درد کی گاہک ہے چشمِ ناز اس کی             سو ہم بھی اس کی گَلی سے گزر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے اس کو بھی ہے شعر و شاعری سے شغف         تو ہم بھی معجزے اپنے ہنر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے بولےتو باتوں سے پھول جھڑتے ہیں                 یہ بات ہے تو چلو بات کر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے رات اسے چاند تکتا رہتا ہے                             ستارے بام فلک سے اتر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے دن کو اسے تتلیاں ستاتی ہیں                          سُنا ہے رات کو جگنو ٹھہر کے دیکھتَےہیں

سُنا ہے حشر ہیں ——-

  • سُنا ہے حشر ہیں‌اس کی غزال سی آنکھیں                 سُنا ہے اس کو ہرن دشت بھر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے رات سے بڑھ کر ہیں‌کاکلیں اس کی                   سُنا ہے شام کو سائے گزر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے اس کی سیاہ چَشم گی قیامت ہے                 سو اُس کو سُرمہ فروش آہ بَھر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہےجب سے حمائل ہے اس کی گَردن میں                    مَزاج اور ہی لعل و گوہر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے اس کے بَدن کی تراش ایسی ہے                           کہ پھول اپنی قبائیں کتر کے دیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے اس کے لبوں سے گلاب جلتے ہیں                         سو ہم بہار پہ الزام دَھر کےدیکھتَے ہیں
  • سُنا ہے آئینہ تمثال ہے جَبیں اس کی                 جو سَادہ دِل ہیں‌اُسے بَن سَنور کے دیکھتَے ہیں
  • بس اک نگاہ سے لٹتا ہے قافلہ دل کا                             سو راہ روانِ تمنا بھی ڈَر کے دیکھتَے ہیں
  • وہ سَرو قَد ہے مَگر بے گُل مُراد نہیں                         کہ اِس شَجر پہ شگُوفے ثَمر کے دیکھتَے ہیں
  • بَس اِك نَگاہ سے لوٹا ہے قافلہ دِل كا                            سو  رہ ِ رَوان تَمنَا بھی ڈر كے دیكھتے ہیں
  • سُنا ہے اس کے شبَستَاں سے مَتصل ہے بَہشت       مکیں‌ ادھر کے بھی جلوے اِدھر کے دیکھتَے ہیں
  • کسے نصیب کے بے پیرہن اسے دیکھے                        کبھی کبھی درودیوار گھر کے دیکھتَے ہیں
  • رکے تو گردشیں اس کا طواف کرتی ہیں                     چلَے تو اُس کو زمانے ٹھہر کے دیکھتَے ہیں
  • کہانیاں ہی سہی ، سب مبالغے ہی سہی                          اگر وہ خَواب ہے تَعبیر کرکے دیکھتَے ہیں
  • اَب اِس کے شہر میں‌ٹھہریں کہ کُوچ کر جائیں                فَراز آؤ ستِارے سَفر کے دیکھتَے ہیں‌‌
  • احمد فراز

read more

thanx for free image download.

http://www.hdnicewallpapers.com/Kareena-Kapoor-Wallpapers

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: