kaifi azmi poetry in urdu best 25 shayari

read kaifi azmi poetry in urdu.

تم اتنا جو مسکرا رہے ہو 

کیا غم ہے جس کو چھپا رہے ہو

ṯum ɨṯņā jō muskrā rāhāy hō

kɨyā ghām hāy jɨs kō chupā rāhy hō

aaj socha tu aanso bhar aaye - kaifi azmi poetry in urdu - besturdupoetry.pk
aaj socha tu aanso bhar aaye – kaifi azmi poetry in urdu – besturdupoetry.pk

آج سوچا تو آنسو بھر آئے 

مدتیں ہو گئیں مسکرائے

āāj sōchā ṯu āāņsō bhār āāyē

mudāṯāɨņ hō gāɨ muskurāyē

کی ہے کوئی حسین خطا ہر خطا کے ساتھ

تھوڑا سا پیار بھی مجھے دے دو سزا کے ساتھ

kɨ hāy kōɨ hāsēēņ khāṯā hār khāṯā kāy sāṯh

ṯhōrrā sā pɨyār bhɨ mujhy dāy dō sāzā kāy sāṯh

اتنا تو زندگی میں کسی کے خلل پڑے 

ہنسنے سے ہو سکون نہ رونے سے کل پڑے

ɨṯņā ṯu zɨņdāgɨ māɨņ kɨsɨ kāy khālāl pārry

hāņsāņy sāy hō sākōōņ ņā rōņāy sāy kāl pārry

muddat kay baad us nay
muddat kay baad us nay

مدت کے بعد اس نے جو کی لطف کی نگاہ 

جی خوش تو ہو گیا مگر آنسو نکل پڑے 

muddāṯ kāy bāād us ņāy kɨ jō luṯf kɨ ņɨgāh

jēē khush ṯu hō gɨyā māgār āāņsō ņɨkāl pārry

mera bachpan bhi sath lay aya -  kaifi azmi poetry in urdu
mera bachpan bhi sath lay aya – kaifi azmi poetry in urdu

میرا بچپن بھی ساتھ لے آیا 

گاؤں سے جب بھی آ گیا کوئی 

mērā bāchpāņ bhɨ sāṯh lāy āyā

gāōņ sāyjāb bhɨ āā gɨyā kōɨ

kaifi azmi poetry in urdu

gurbat ki thandi chaon main
gurbat ki thandi chaon main

غربت کی ٹھنڈی چھاؤں میں یاد آئی اس کی دھوپ 

قدر وطن ہوئی ہمیں ترک وطن کے بعد 

gurbāṯ kɨ ṯhāņdɨ chāōņ māɨņ yāād āāɨ us kɨ dhōōp

qādār-ē-wāṯāņ huɨ hāmāɨņ ṯārk-ē-wāṯāņ kāy bāād

belchay lao kholo zameen ki teh
belchay lao kholo zameen ki teh

بیلچے لاؤ کھولو زمیں کی تہیں 

میں کہاں دفن ہوں کچھ پتا تو چلے 

bēlchāy lāō khōlō zāmēēņ kɨ ṯēh

māɨņ kāhāņ dāfāņ hōōņ kuch pāṯā ṯu chāly

rōz bhārrṯā hōōņ jāhāņ sāy
rōz bhārrṯā hōōņ jāhāņ sāy

روز بڑھتا ہوں جہاں سے آگے 

پھر وہیں لوٹ کے آ جاتا ہوں 

rōz bhārrṯā hōōņ jāhāņ sāy āāgāy

phɨr wāhɨņ lāuṯ kāy āā jāṯā hōōņ

bahar aye tu mera salam keh dena
bahar aye tu mera salam keh dena

بہار آئے تو میرا سلام کہہ دینا 

مجھے تو آج طلب کر لیا ہے صحرا نے 

bāhār āyē ṯu mērā sālām kēh dēņā

mujhy ṯu āāj ṯālāb kār lɨyā hāy sēhrā ņāy

insan ki khwahishon ki koi nahi intaha
insan ki khwahishon ki koi nahi intaha

انساں کی خواہشوں کی کوئی انتہا نہیں 

دو گز زمیں بھی چاہیئے دو گز کفن کے بعد 

ɨņsāņ kɨ khwāhɨshōņ kɨ kōɨ ɨņṯhā ņāhɨ

dō gāzz zāmɨņ bhɨ chāhɨyē dō gāz kāfāņ kāy bāād

roz bastay haan kai shehar naye
roz bastay haan kai shehar naye

روز بستے ہیں کئی شہر نئے 

روز دھرتی میں سما جاتے ہیں 

rōz bāsṯy hāāņ kāɨ shēhr ņāyē

rōz dhārṯɨ māɨņ sāmā jāṯy hāāņ

کیفی اعظمی شاعری

koi kehta tha samundar hoon main
koi kehta tha samundar hoon main

کوئی کہتا تھا سمندر ہوں میں 

اور مری جیب میں قطرہ بھی نہیں 

kōɨ kēhṯā ṯhā sāmuņdār hōōņ māɨņ

āur mērɨ jēɨb māɨņ kāṯrā bhɨ ņāhɨ

gar dobna hi apna muqadar hay tu suno
gar dobna hi apna muqadar hay tu suno

گر ڈوبنا ہی اپنا مقدر ہے تو سنو 

ڈوبیں گے ہم ضرور مگر ناخدا کے ساتھ 

gār dōbņā hɨ āpņā muqādār hāy ṯu suņō

dōbāɨņ gāy hām zārōr māgār ņā-khudā kāy sāṯh

کوئی تو سود چکائے کوئی تو ذمہ لے 

اس انقلاب کا جو آج تک ادھار سا ہے 

kōɨ ṯu sōōd chukāyē kōɨ ṯu zɨmā lāy

ɨss ɨņkālāb kā jō āāj ṯāk udhār sā hāy

jhuki jhuki si nazar
jhuki jhuki si nazar

جھکی جھکی سی نظر بے قرار ہے کہ نہیں

دبا دبا سا سہی دل میں پیار ہے کہ نہیں

jhukɨ jhukɨ sɨ ņāzār hāy bē-qārār hāy kā ņāhɨ

dābā dābā sā sāhɨ dɨl māɨņ pɨyār hāy kāy ņāh

teri umeed paiy thukra raha hoon duniya ko
teri umeed paiy thukra raha hoon duniya ko

تری امید پہ ٹھکرا رہا ہوں دنیا کو 

تجھے بھی اپنے پہ یہ اعتبار ہے کہ نہیں

Ṯērɨ umēēd pāy ṯhukrā rāhā hōōņ duņɨyā kō

Ṯujhāy bhɨ āpņāy pāy āɨṯbār hāy kāy ņāhɨ

بن جائیں گے زہر پیتے پیتے

یہ اشک جو پیتے جا رہے ہو 

Bāņ jāɨņ gāy zēhār pēēṯāy pēēṯāy

Yēh āshk jō pēēṯāy jā rāhāy hō

وہ تیغ مل گئی جس سے ہوا ہے قتل مرا 

کسی کے ہاتھ کا اس پر نشاں نہیں ملتا 

Wō ṯēɨgh mɨl gāɨ jɨs sāy huwā hāy qāṯāl mērā

Kɨsɨ kāy hāṯh kā ɨss pēr ņɨshāņ ņāhɨ mɨlṯā

کھڑا ہوں کب سے میں چہروں کے ایک جنگل میں 

تمہارے چہرے کا کچھ بھی یہاں نہیں ملتا 

Khārrā hōōņ kāb sāy māɨņ chēhrōņ kāy āɨk jāņglē māɨņ

Ṯumhārāy chēhrāy kā kuch bhɨ yāhāņ ņāhɨ mɨlṯā

sad poetry

dil ki nazak ragain tut-ti hain
dil ki nazak ragain tut-ti hain

دل کی نازک رگیں ٹوٹتی ہیں 

یاد اتنا بھی کوئی نہ آئے 

Dɨl kɨ ņāzāk rāgāɨņ ṯuṯ-ṯṯɨ hāāņ

Yāād ɨṯņā bhɨ kōɨ ņā āāyēy

شور یوں ہی نہ پرندوں نے مچایا ہوگا 

کوئی جنگل کی طرف شہر سے آیا ہوگا

Shōr yōuņ hɨ ņā pārɨņdōņ ņāy māchāyā hō gā

Kōɨ jāņgāl kɨ ṯārāf shēhēr sāy āyā hō gā

پیڑ کے کاٹنے والوں کو یہ معلوم تو تھا 

جسم جل جائیں گے جب سر پہ نہ سایہ ہوگا 

Pāɨr kāy kāṯņāy wālōņ kō yēh mālōōm ṯuṯ hā

Jɨsm jāl jāl jāɨņ gāy jāb sār pāy ņā sāyā hō gā

اپنے جنگل سے جو گھبرا کے اڑے تھے پیاسے 

ہر سراب ان کو سمندر نظر آیا ہوگا 

Āpņāy jāņglē sāy jō ghābrā kāy urrāy ṯhāy pɨyāsāy

Hār sārāb uņ kō sāmuņdēr ņāzār āyā hō gā

دیوانہ پوچھتا ہے یہ لہروں سے بار بار 

کچھ بستیاں یہاں تھیں بتاؤ کدھر گئیں 

Dēwāņā puchṯā hāy yēh lēhrōņ sāy bār bār

Kuch bāsṯɨyāņ yāhāņ ṯhɨņ, bāṯāō kɨdhār gāɨņ

kaifi azmi poetry in urdu

read more

thanx for free image download

https://www.elsetge.cat/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: