kabhi kaha na kisi se lyrics

read ghazal kabhi kaha na kisi se lyrics

کبھی کہا نہ کِسی سے تیرے فسانے کو

نہ جانے کیسے خبر ہو گئی زمانے کو

سٌنا ہے غیر کی محفل میں تٌم نہ جاٶ گے

کہو تو آج سجا دوں غریب خانے کو

دٌعا بہار کی مانگی تو اِتنے پھول کھِلے

کہیں جگہ نہ مِلی تیرے آشیانے کو

میری لحد پہ  پتنگوں کا خون ہوتا ہے

حضور شمع نہ لایا کریں جلانے کو

دَبّا کے قبر میں سب چَل دٕیے دٌعا نہ سلام

ذرا سی دیر میں کیا ہو گیا زمانے کو

اَب آگے اِس میں تُمھارا بھی نام آئے گا

جو حُکم ہو تو یہیں چھوڑ دوں فسانے کو

قمرؔ ذرا بھی نہیں تٌم کو خوفِ رٌسوائی

کہ چاندنی میں چلے ہو اٌنھیں منانے کو

ghazal kabhi kaha na kisi se lyrics

kabhi kaha na kisi say tery fasany ko

na jany kesy khabar ho gai zamany ko

suna hai gher ki mehfil main tum na jao gaiy

kaho tu aaj saja doon ghareeb khany ko

dua bahar ki mangi tu itnay phool khily

kahin jaga na milli tery aashiyany ko

Meri lehed pay patangon ka khon hota hai

Hazor shamah na laya karain jalany ko

dabba kay qabr main sab chal diye dua na salam

zarra si dair main kiya ho giya zamany ko

Ab aagay iss main tumhara bhi naam aye ga

Jo hukm ho tu yahin chor dun fasanay ko

qamar zara bhi nahi tum ko khauf e ruswai

keh chandni main chally ho unhain manany ko

read more

thanx for free image download

https://www.pexels.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: