chupke chupke raat din lyrics ghazal

Ghazal “Chupke chupke raat din” is written by Hasrat Mohani. This is an outstanding great example of romantic poetry. Not only one verse but all ghazal have beautifully expression of love.

It is very famous in ghazal mushaira. Sung by Ghulam Ali is very famous.

Chupke chupke raat din lyrics

Chupke chupke raat din aansu bahana yad ha
Ham ko ab tak ashiqi ka wo zamana yad ha

ba hazaran iztrab o sad hazaran ishtiaq

tujh se vo pehle pehl dil ka lagana yad ha

bar bar uthna usi janab nigah e shoq ka

aur tera ghirfe se wo ankhen larana yaad ha

Tujhase milke hi vo kuch Bebaak ho jaana mera
Aur tera danton main wo Ungali dabana yad ha

Khench lenaa wo mera parde ka kona daffatan
Aur Dupate se tera Wo Munh ko Chupana yad ha

Jaan kar sotaa tujhe vo qasa-e-paabosii meraa
Aur teraa Thukaraa ke sar vo muskuraanaa yaad hai

Tujh ko jab tanhaa kabhii paanaa to az_raahe-lihaaz
Hal-e-dil baatoon hii baatoon mein jataanaa yaad hai

Jab sivaa mere tumhaaraa koii diivaanaa na thaa
Sach kaho kyaa tum ko bhii vo kaarKhana yaad hai

Gair kii nazaroon se bachakar sab kii marzii ke Khilaaf
Vo teraa chorii chhipe raatoon ko aanaa yaad hai

Aa gaya gar vasl kii shab bhii kahiin zikr-e-firaaq
Vo teraa ro ro ke bhi mujhko rulana yaad hai

Dupahar ki dhup mein mere bulane ke liye
wo tera kothhe pe nange paaon ana yad ha

Aaj tak nazron main ha, vo suhbat e raz o niaz

apna jana yad ha, tera bulana yad ha

methi methi cher kar batain nirali piyar ki

zikr dushman ka wo baton main urana yad ha

Dekhanaa mujhako jo bargashta to su su naz se
Jab mana lenaa to phir Khud ruth jaanaa yad ha

Chori Chori ham se tum a kr mile the jis Jagah
Mudatain Guzari par ab tk vo Thikana yad ha

shauq main mehdi ke wo be dast o pa hona tera

aur mera wo cherna wo gud gudana yad ha

Bawajod e idae itiffaqan ‘Hasrat’ mujhe
Aaj tak ahad e hawas ka wo fasana yad ha

lyrics in urdu

chupke chupke raat din _ romantic poetry - besturdupoetry.pk
chupke chupke raat din _ romantic poetry – besturdupoetry.pk

چپکے چپکے رات دن آنسو بہانا یاد ہے ہم کو اب تک عاشقی کا وہ زمانہ یاد ہے

با ہزاراں اضطراب و صد ہزاراں اشتیاق تجھ سے وہ پہلے پہل دل کا لگانا یاد ہے

بار بار اُٹھنا اسی جانب نگاہ ِ شوق کا اور ترا غرفے سے وُہ آنکھیں لڑانا یاد ہے

تجھ سے کچھ ملتے ہی وہ بے باک ہو جانا مرا اور ترا دانتوں میں وہ انگلی دبانا یاد ہے

کھینچ لینا وہ مرا پردے کا کونا دفعتاً اور دوپٹے سے ترا وہ منہ چھپانا یاد ہے

جان کرسونا تجھے وہ قصد ِ پا بوسی مرا اور ترا ٹھکرا کے سر، وہ مسکرانا یاد ہے

تجھ کو جب تنہا کبھی پانا تو ازراہِ لحاظ حال ِ دل باتوں ہی باتوں میں جتانا یاد ہے

جب سوا میرے تمہارا کوئی دیوانہ نہ تھا سچ کہو کچھ تم کو بھی وہ کارخانا یاد ہے

غیر کی نظروں سے بچ کر سب کی مرضی کے خلاف وہ ترا چوری چھپے راتوں کو آنا یاد ہے

آ گیا گر وصل کی شب بھی کہیں ذکر ِ فراق وہ ترا رو رو کے مجھ کو بھی رُلانا یاد ہے

دوپہر کی دھوپ میں میرے بُلانے کے لیے وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے

آج تک نظروں میں ہے وہ صحبتِ راز و نیاز اپنا جانا یاد ہے،تیرا بلانا یاد ہے

میٹھی میٹھی چھیڑ کر باتیں نرالی پیار کی ذکر دشمن کا وہ باتوں میں اڑانا یاد ہے

دیکھنا مجھ کو جو برگشتہ تو سو سو ناز سے جب منا لینا تو پھر خود روٹھ جانا یاد ہے

چوری چوری ہم سے تم آ کر ملے تھے جس جگہ مدتیں گزریں،پر اب تک وہ ٹھکانہ یاد ہے

شوق میں مہندی کے وہ بے دست و پا ہونا ترا اور مِرا وہ چھیڑنا، گُدگدانا یاد ہے

با وجودِ ادعائے اتّقا حسرت مجھے آج تک عہدِ ہوس کا وہ فسانا یاد ہے

حسرت موہانی

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: