Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

saghar siddiqui poetry in urdu best 20 sher

read saghar siddiqui poetry in urdu also known as sagar poetry.

جس عہد میں لٹ جائے غریبوں کی کمائی

اس عہد کے سلطان سے کوئی بھول ہوئی ہے

jis ehad main lut jaye ghareebon ki kamai

us ehad kay sultan say koi bhool hui hai

urrta huwa ghubar sar-e-rah dekh kar
urrta huwa ghubar sar-e-rah dekh kar

اُڑتا ہُوا غُبار سَرِراہ دیکھ کر

انجام ہم نے عشق کا سوچا تو رو دئیے

urrta huwa ghubar sar-e-rah dekh kar

anjam hamm nay ishq ka socha tu ro diye

ab apni haqeqat bhi sagar bay rabt kahani lagti hai
ab apni haqeqat bhi sagar bay rabt kahani lagti hai

اب اپنی حقیقت بھی ساغرؔ بے ربط کہانی لگتی ہے

دُنیا کی حقیقت کیا کہیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے

ab apni haqeqat bhi sagar bay rabt kahani lagti hai

duniya ki haqeeqat kiya kahye, kuch yaad rahi kuch bhool gaye

میں آدمی ہوں کوئی فرشتہ نہیں حضور

میں آج اپنی ذات سے گبھرا کے پی گیا

main aadmi hoon koi farishta nahi hazoor

main aaj apni zaat say ghabra kay pii giya

ساغرؔکِسی کی یاد میں جب اشکبار تھے

کِتنے حسین دِن تھے جہانِ خراب میں

sagar kisi ki yaad main jab askbar thay

kitnay haseen din thay, jahan-e-kharab main

saghar siddiqui poetry in urdu

جن کے دامن میں کُچھ نہیں ہوتا 

اُن کے سینوں میں پیار دیکھا ہے

jin kay daman main kuch nahi hota

un kay seenoon main piyar dekha hai

میں نے پلکوں سے دَرِ یار پہ دستک دی ہے

میں وہ سائل ہوں جِسے کوئی صدا یاد نہیں

main nay palkon say dar-e-yaar pay dastak di hai

main wo saa-el hoon jisay koi sada yaad nahi

اے دِل بے قرار چٌپ ہو جا

جا چٌکی ہے بہار چٌپ ہو جا

aye dil e beqarar chup ho ja

ja chuki hai bahar chup ho ja

ایسے زخموں کو کیا کرے کوٸ

جن کو مرہم سے آگ لگ جاۓ

aisy zakhmon ko kiya kary koi

jin ko marham say aag lag jaye

میری غربت نے میرے فن کا اڑا رکھا ہے مذاق۔۔

تیری دولت نے تیرے عیب چھپا رکھے ہیں

meri gurbat nay mery fun ka urra rakha hai mazak

teri daulat nay tery aib chupa rakhy hain

میں تلخیِٕ حیات سے گھبرا کے پی گیا

غم کی سیاہ رات سے گھبرا کے پی گیا

main talkhi e hayat say ghabra kay pi giya

gham ki sayah raat say ghabra kay pi giya

یہ کِناروں سے کھیلنے والے

ڈوب جائیں تو کیا تماشا ہو

ye kinaron say khelny waly

dobh jain tu kiya tamasha ho

موت کہتے ہیں جس کو اے ساغرؔ

زندگی کی کوئی کڑی ہو گی

ham log tu mae nosh hain badnam hain sagar
ham log tu mae nosh hain badnam hain sagar – saghar siddiqui poetry in urdu

 hum ahle wafa husn ko ruswa nahi karte

ہم اہل وفا حُسن کو رسوا نہیں کرتے

پردہ بھی اٹھائیں رُخ سے تو دیکھا نہیں کرتے

کرلیتے ہیں دل اپنا تصّور سے ہی روشن

مُوسیٰ کی طرح طُور پہ جایا نہیں کرتے

رکھتے ہیں جو اوروں کےلیے پیار کا جذبہ

وہ لوگ کبھی ٹُوٹ کر بکھرا نہیں کرتے

کہتی ہے تو کہتی رہے مغرور یہ دنیا

ہم مُڑ کر کسی شخص کو دیکھا نہیں کرتے

ہم لوگ تو مے نوش ہیں بدنام ہیں ساغر

پاکیزہ جو ہیں لوگ وہ کیاکیا نہیں کرتے 

ham eh-le wafa husn ko ruswa nahi kartay

parda bhi uthain rukh say tu dekha nahi kartay

kar letay hain dil apna tasawar say hi roshan

musa ki tarha toor pay jaya nahi kartay

rakhtay hain jo auron kay liye piyar ka jazba

wo log kabhi toot kar bikhra nahi kartay

kehti hai tu kehti rahay maghror yeh duniya

ham murrr kar kisi shakhs ko dekha nahi kartay

ham log tu mae nosh hain badnam hain sagar

pakeeza jo hain log wo kiya kiya nahi kartay

read more

thanx for free image download

https://unsplash.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge