jal bhi chukay parwanay ho bhi chuki ruswai

read ghazal jal bhi chukay parwanay —

جل بھی چُکے پروانے ہو بھی چُکی رُسوائی

اَب خاک اُڑانے کو بیٹھے ہیں تَماشائی

تَارَوں کِی ضَیّا دِل میں اِک آگ لَگاتی ہے

آرام سے راتوں کو ، سوتے ہیں سودائی

راتوں کی اُداسی میں خاموش ہے دِل میرا

بے حِس ہیں تمنّائیں، نیند آئے کہ موت آئے

اَب دِل کو کِسی کروٹ آرام نہیں مِلتا

اِک عُمر کا رونا ہے دو دِن کی شناسائی

شہزاد احمد

lyrics ghazal

Jal bhi chukay parwanay ho bhi chuki ruswai

Ab khak urranay ko baithay haan tamashai

Tarron ki ziyya dil main ik aag lagati hai

Aaram say raaton ko sotay haan soddai

Raaton ki udasi main khamosh hai dil mera

Be-hiss hain tamana-iin, neend aaye kay maut aaye

Ab dil ko kisi karwat aaram nahi milta

Ik umer ka rona hai ddo din ki shanasai

poet name shehzad ahmed

read more

thanx for free image download

https://www.ecopetit.cat/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: