tumhare khat mein naya ek – lyrics in urdu

Read tumhare khat mein naya ek salam kis ka tha – lyrics in urdu

ghazal – tumharay khat main

read tumhare khat mein naya ek salaam lyrics in urdu

tumhare khat mein naya ek salam kis ka tha
na tha raqeeb tu aakhir woh name kis ka tha

wo qatal kar key mujhe har kisi se puchate han

ye kam kis ne kiya ha yeh kam kis ka tha

wafa karainge nibhayaingy baat maanegy
tumhy bhi yaad kuch ye kalam kiska tha

raha na dil mein woh bedard aur dard raha
mukim kun hua hai makaam kiska tha

na puchgich thi, kisi ki wahan na aao bhagat

tumhari bazm main kal ehtamam kis ka tha

tamam bazm jisy sun key reh gai mushtaq

kaho wo tazkara natamam kis ka tha

hamare khat kay tu purzay kiye parha bhi nahi

suna jot u nay bay dil, wo piyam kis ka tha

uthai kiyoun na qiyamat aado kay kochay main

lehaz aap ko waqt khram kis ka tha

guzar gaya woh zamana kahain tu kis se kahain
khyaal dil ko mere subah o sham kis ka tha

hamain tu hazrat waiz ki zid nay palwai

yahan irada e sharb e madam kis ka tha

agarcha dekhny waly tere hazaroon thy

tabah haal buhat zer bam kis ka tha

wo kon tha key tumhain jis nay bewafa jana

khiyal kham yeh sauda e kham kis ka tha

unhin sifat se hota ha aadmi mashhoor

jo lutf aam wok arty ye name kis ka tha

 har ek sy kehaty hai kya“daag” bewafa nikala
ye puchy  insy koi woh ghulam kiska thaa

tumhare khat mein naya ek salam kis ka tha

read more

تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا lyrics in urdu

tumhary khat main naya ik salam full ghazal lyrics - besturdupoetry.pk
tumhary khat main naya ik salam full ghazal lyrics – besturdupoetry.pk

تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا                    نہ تھا رقیب تو آخر وہ نام کس کا تھا

وہ قتل کر کے مجھے ہر کسی سے پوچھتے ہیں               یہ کام کس نے کیا ہے یہ کام کس کا تھا

وفا کریں گے نباہیں گے بات مانیں گے                   تمہیں بھی یاد ہے کچھ یہ کلام کس کا تھا

رہا نہ دل میں وہ بے درد اور درد رہا                      مقیم کون ہوا ہے مقام کس کا تھا

نہ پوچھ گچھ تھی کسی کی وہاں نہ آؤ بھگت                تمہاری بزم میں کل اہتمام کس کا تھا

تمام بزم جسے سن کے رہ گئی مشتاق                          کہو وہ تذکرۂ ناتمام کس کا تھا

ہمارے خط کے تو پرزے کئے پڑھا بھی نہیں           سنا جو تو نے بہ دل وہ پیام کس کا تھا

اٹھائی کیوں نہ قیامت عدو کے کوچے میں               لحاظ آپ کو وقت خرام کس کا تھا

گزر گیا وہ زمانہ کہوں تو کس سے کہوں                خیال دل کو مرے صبح و شام کس کا تھا

ہمیں تو حضرت واعظ کی ضد نے پلوائی                 یہاں ارادۂ شرب مدام کس کا تھا

اگرچہ دیکھنے والے ترے ہزاروں تھے                  تباہ حال بہت زیر بام کس کا تھا

وہ کون تھا کہ تمہیں جس نے بے وفا جانا            خیال خام یہ سودائے خام کس کا تھا

انہیں صفات سے ہوتا ہے آدمی مشہور                جو لطف عام وہ کرتے یہ نام کس کا تھا

ہر اک سے کہتے ہیں کیا داغؔ بے وفا نکلا            یہ پوچھے ان سے کوئی وہ غلام کس کا تھا

داغ دہلویؔ    

thanx for free image download

https://unsplash.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: