Our website is made possible by displaying online advertisements to our visitors. Please consider supporting us by whitelisting our website.

poetry on poverty in urdu Ghurbat Poetry

read poetry on poverty in urdu

آج پھر مارے گی ماں مٌجھے

گاٶں میں آیا ہے اِک کھلونے والا

aaj phir mary gi maan mujhy

gaon main aya hai ik khilony wala

روٹی کو ڈھونڈتا ہٌوا کوڑے کے ڈھیر پر

دیکھا ہے اک چاند کا ٹکڑا ابھی ابھی

roti ko dhundta huwa korry kay dher par

dekha hai ik chand ka tukrra abhi abhi

تیرے ہوۓ بھی اے خالق

مٌجھ پہ ہر شخص نے خٌدائی کی

tery hoty huwy bhi aye khaliq

mujh pay har shakhs nay khudai ki

وہ اکثر دِن میں بچوں کو سٌلا دیتی ہے اس ڈر سے

گلی میں پھر کھلونے بیچنے والا نہ آ جاۓ

poetry on poverty in urdu

مٌفلس کے بدن کو بھی ہے چادر کی ضرورت

اب کھٌل کے مزاروں پہ یہ اعلان کیا جاۓ

muflis kay badan ko bhi hai chadar ki zarurat

ab khul ky mazaron pay ye elan kiya jaye

بھوک پھرتی ہے میرے مٌلک میں ننگے پاٶں

رزق ظالم کی تجوری میں چھٌپا بیٹھا ہے

bhok phirti hai mery mulk main nangy paon

rizk zalim ki tajori main chupa baitha hai

ممکن ہے ہمیں گاٶں بھی پہچان نہ پاۓ

بچپن میں ہی ہم گھر سے کمانے نِکل آۓ

mumkin hai hamain gaon bhi pehchan na paye

bachpan main hi ham ghar say kamany nikal aaye

Ghurbat shayari

غٌربت نے میرے بچوں کو تہذیب سِکھا دی

سہمے ہٌوۓ رہتے ہیں شرارت نہیں کرتے

ghurbat nay mery bachon ko tehzeeb sikha di

sehmy huvy rehty hain shrart nahi karty

read more

سو گۓ بچے غریب کے جلدی سے یہ سن کر

فرشتے آتے ہیں خوابوں میں روٹیاں لے کر

read more

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge