wo jo hum main tum main qarar lyrics in urdu

wo jo ham main tum main qarar tha ghazal in urdu – Ghulam ali

This ghazal “wo jo hum main tum main qarar tha” ghazal is written by momin khan momin.

Romantic poetry in urdu.

wo jo hum main tum main qarar tha  tumhain yad ho ky na yad ho
wahi yani wada nibah ka tumhain yad ho ky na yad ho
wo jo lutf mujh pe thy beshter wo karam ky tha mery haal par
mujhy sab hai yad zara zara tumhain yad ho ky na yad ho
wo naey gily wo shikayatain wo maze maze ki hikayatain
wo har aik baat pe ruthna tumhain yad ho ki na yad ho
kabhi baithe sab men jo ro ba ru to isharaton hi se guftagu
wo bayan shauq ka barmala tumhain yad ho ki na yad ho

hue ittifaq se gar baham to vafa jatane ko dam ba dam
gila e malamat e aqriba tumhain yad ho ki na yad ho
koi baat aisi agar hui ky tumhare ji ko buri lagi
wo bayan se pahle hi bhulna tumhain yad ho ky na yad ho
kabhi ham men tum men bhi chahh thi kabhi ham se tum se bhi raah thi
kabhi ham bhi tum bhi thy ashna tumhain yad ho ky na yad ho
suno zikr hai kaii saal ka, kiya ek aap ne vaada tha
so nibhane ka to zikr kya tumhain yad ho ki na yad ho

kaha main ne baat wo kotthe ki, mire dil se saaf utar gai
tu kaha ky jaane miri bala tumhain yad ho ky na yad ho
wo bigdna vasl ki raat ka wo na man na kisi baat ka
wo nahin nahin ki har aan ada tumhain yad ho ki na yad ho jesy aap ginty thy ashna, jise aap kahty the baywafa
main vahi huun “momin” e mubtala tumhain yad ho ky na yad ho

lyrics in urdu- wo jo hum main tum main qarar tha

wo jo hum main tum main - momin khan momin- besturdupoetry.pk
wo jo hum main tum main – momin khan momin- besturdupoetry.pk

وہ جو ہم میں تُم میں قرار تھا تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہی یعنی وعدہ نباہ کا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
وہ جو لُطف مُجھ پہ تھے بیشتر، وہ کرم کہ تھا میرے حال پر

مُجھے سب ہے یاد زرا زرا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
وہ نئے گِلے وہ شِکائتیں، وہ مزے مزے کی حِکایتں

وہ ہر ایک بات پہ روٹھنا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
کبھی بیٹھے سب میں جو روبرو، تو اِشارتوں ہی سے گُفتگو

وہ بیان شوق کا برمِلا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
ہوئے اِتفاق سے گر بہم ، تو وفا جتانے کو دم بہ دم

گِلہِ ملامتِ اقرِبا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کوئی بات ایسی اگر ہوئی،کہ تُمھارے جی کو بُری لگی

وہ بیاں سے پہلے ہی بھولنا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو  

کبھی ہم میں تُم میں بھی چاہ تھی، کبھی ہم سے تُم سے بھی راہ تھی

کبھی ہم بھی تُم بھی تھے آشنا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
سُنو ذکر ہے کئی سال کا، کِیا ایک آپ نے وعدہ تھا

سو نِبھانے کا تو ذِکر کِیا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
کہا میں نے بات وہ کوٹھے کی، میرے دِل سے صاف اُتر گئی

تو کہا کہ جانے میری بلا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہ بِگڑنا وصل کی رات کا، وہ نہ ماننا کِسی بات کا

وہ نہیں نہیں کی ہر آن ادا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

جِسے آپ گِنتے تھے آشنا، جِسے آپ کہتے تھے باوفا

میں وہی ہوں مومنؔ مُبتلا، تُمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

مومن خان مومن

Special thanks for free image download

https://unsplash.com/


Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: