ab nahi koi baat khtray ki – ab sabhi ko

read jaun elia poetry in urdu – ab nahi koi baat —

اب نہیں کوئی بات خطرے کی

اب سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے

ab nahi koi baat khtray ki

ab sabhi ko sabhi say khatra ha

this sher is very famous in these days. Coronavirus epidemic is everywhere in the world. ٰIt is an infectious disease. So everyone is avoiding to touch. This sher is written very long ago. But nowadays this represents our society’s behavior.

read more jaun elia poetry

this sher is taken from jaun elia ghazal “esh umeed hi say khatra hai”

ab nahi koi baat khtray ki full ghazal in urdu

عیشِ اُمید ہی سے خَطرہ ہے           دِل کو اَب دل ہی سے خَطرہ ہے   

ہے کُچھ ایسا کہ اِس کی جَلوت میں              ہمیں اپنی کمی سے خَطرہ ہے

جس کے آغوش کا ہوں دیوانہ                 اس کے آغوش ہی سے خَطرہ ہے

یاد کی دھُوپ تو ہے روز کی بات            ہاں مجھے چاندنی سے خَطرہ ہے

ہے عجب کچھ معاملہ دَرپیش                      عقل کو آگہی سے خَطرہ ہے

شہرِ غدار جان لے کہ تجُھے                       ایک امروہوی سے خَطرہ ہے

ہے عَجب طور حالت گِریہ                       کہ مژہ کو نمی سے خَطرہ ہے

حال خوش لکھنؤ کا دلی کا                   بس انہیں مصحفیؔ سے خَطرہ ہے

آسمانوں میں ہے خُدا تنہا                            اور ہر آدمی سے خَطرہ ہے

میں کہوں کس طرح یہ بات اس سے            تجھ کو جَانم مُجھی سے خَطرہ ہے

آج بھی اے کنار بان مجھے                       تیری اک سَانولی سے خَطرہ ہے

ان لبوں کا لہُو نہ پی جاؤں                           اپنی تشنہ لَبی سے خَطرہ ہے

جونؔ ہی تو ہے جونؔ کے درپئے                   میرؔ کو میرؔ ہی سے خَطرہ ہے

اب نہیں کوئی بات خَطرے کی                 اب سبھی کو سبھی سے خَطرہ ہے

Ghazal esh e umeed hi say khatra hay

Esh e umeed hi say khatira hay,

 dil ko ab dil hi say khatra hay

hay kuch aisa kay iss ki jalwat main

hamain apni kami say khatra hay

jis kay aghosh ka hoon dewana

us kay aghosh hi say khatra hay

yaad kid hoop tu hay roz ki baat

haan mujhy chandni say khatra hay

hay ajab kuch muamla darpaish

aqql ko aaghi say khatra hay

shehar e ghaddar jaan lay kay tujhy

aik amrohvi say khatra hay

hay ajab taur halat e girya

kay mazza ko name say khatra hay

haal khush lakhnao ka dilli ka

bas inhain mashhfi say khatra hay

aasmanoon main KHUDA tanha

aur har admi say khatra hay

main kahoon kis tarah yeh baat us say

tujh ko jannam mujhi say khatra hay

aaj bhi aye kanar baan mujhy

teri ik sanwali say khatra hay

un labbon ka laho na pi jaoon

apni tashna labi say khatra hay

june hi tu jaun kay dar pay

meer ko meer hi say khatra hay

ab nahi koi baat khtray ki

ab sabhi ko sabhi say khatra hay

thanx for image download

https://www.coventrytelegraph.net/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: