qateel shifai poetry in urdu best 20 sher

read qateel shifai poetry in urdu.

جو بھی آتا ہے بتاتا ہے نیا کوئی علِاج

بَٹ نہ جائے ترا بیمار مسیحاؤں میں

jo bhi aata hai batata hai naya koi ilaj

batt na jaye tera bemar masihaoon main

log ab mujh ko teray naam say pehchantay haan
log ab mujh ko teray naam say pehchantay haan

دِل پہ آئے ہوئے اَلزام سے پہچانتے ہیں

لوگ اَب مجھ کو ترے نام سے پہچانتے ہیں

dil pay aaye huway ilzam say pehchantay haan

log ab mujh ko teray naam say pehchantay haan

چلو اَچھا ہُوا کام آ گئی دیوانگی اَپنی 

وَگرنہ ہم زَمانے بَھر کو سَمجھانے کَہاں جَاتے

chalo acha huwa kaam aa gai dewangi apni

wagarna haam zamanay bhar ko samjhanay kahan jatay

 

دوُر تَک چَھائے تھے بَادِل اور کَہیں سَایہ نہ 

اِس طَرح برسَات کا مَوسم کَبھی آیا نہ تَھا 

duur tak chaye thay badil aur kahin saya na tha

iss tarha barsat ka mausam kabhi aya na tha

گُنگُناتی ہُوئی آتی ہیں فَلک سے بُوندیں 

کوئی بَدلی تیری پَازیب سِے ٹَکرائی ہے 

gungunati hui aati han falak say boondain

koi badli teri pazaib say takrai hai

تَرکِ وَفا کے بَعد یہ اُس کی اَدا قتیلؔ 

مُجھ کو سَتائے کوئی تو اُس کو بُرا لَگے 

tarak e wafa kay baad yeh uss ki adda qateel

mujh ko sataye koi tu uss ko bura lagay

 

qateel shifai poetry in urdu

مُفلِس کے بَدن کو بھی ہے چَادر کی ضرورت 

اَب کُھل کے مَزاروں پہ یہ اعلان کِیا جَائے 

muflis kay badan ko bhi hai chadar ki zarorat

ab khull kai mazaron pay yeh elan kiya jaye

اَپنی زُباں تَو بَند ہے تُم خُود ہی سوچ لو 

پَڑتا نہیں ہے یوں ہی سِتم گَر کِسی کا نام 

apni zuban tu band hai tum khud hi soch lo

parrta nahi hai youn hi sitam-gar kisi ka naam

ہَم اِسے یاد بَہت آئیں گے 

جَب اِسے بھی کوئی ٹھُکرائے گا 

ham usay yaad buhat aain gaiy

jab usay bhi koi thukraye ga

تَھک گِیا مَیں کرتے کرتے یاَد تُجھ کو 

اَب تُجھے مَیں یاد آنا چَاہتا ہوں 

thak giya main kartay kartay yaad tujh ko

ab tujhay main yaad ana chahata hoon

لے میرے تَجربوں سے سبق اے میرے رقیب 

دو چَار سال عُمر مَیں تُجھ سے بڑا ہُوں میں 

lay meray tajarbon say sabaq aye meray raqeeb

ddo chaar saal umer main tujh say barra hoon main

مُجھ سے تُو پُوچھنے آیا ہے وَفا کے مَعنی 

یہ تیری سادہ دلی مَار نہ ڈالے مُجھ کو 

mujh say tu puchanay aya hai wafa kay maeni

yeh teri sada dili maar na dalay mujh ko

اَبھی تو بَات کَرو ہم سے دوستوں کی طرح 

پھِر اِختلاف کے پہلُو نِکالتَے رہنا 

abhi tu baat karo haam say doston ki tarah

phir ikhtalaf kay pehlo nikaltay rehna

قتیل شفائی شاعری

کِیا جانے کِس اَدا سے لِیا تُو نے میرا نَام 

دُنیا سَمجھ رہی ہے کہ سَچ مُچ تیرا ہوں مَیں 

kiya janay kis ada say liya tu nay mera naam

duniya samajh rahi hai keh sach much tera hoon main

اَپنے ہَاتھوں کی لَکیروں میں سَجا لے مُجھ کو 

میں ہوں تیرا تو نصیب اپنا بنا لے مُجھ کو 

apnay hathon ki lakeeron main saja lay mujh ko

main hoon tera tu naseeb apna bana lay mujh ko

نَہ جَانے کَون سِی مَنزل پہ آ پہنچا ہے پِیار اَپنا 

نَہ ہم کو اَعتبَار اَپنا نہ اُن کو اَعتبار اَپنا 

na janay kon si manzil pay aa puhancha hai piya apna

na ham ko etibar apna na un ko etibar apna

یوں بھی پیار کے سامان بنا لیتے ہیں

اپنے قاتل کو بھی مہمان بنا لیتے ہیں

youn bhi piyar kay saman bana letay hain

apnay qatil ko bhi mehman bana letay hain

read more

thanx for free image download

https://www.ecopetit.cat/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: