main dekhti hoon tu bas dekhti – aaina poetry

read aaina poetry in Urdu. In Urdu mirror is also known as sheesha or aaina. A poetic point of view about aaina/mirror is not just to see the face but it is also very interesting and amazing. In this blog, you can read poetry on aaina/mirror. Every sher will surprise you about the thinking and creative ideas of the poet.

میں دیکھتی ہوں، تو بس دیکھتی ہی رہتی ہوں

وہ آئینے میں بھی اپنے ہی رنگ چھوڑ گیا

main dekhti hoon tu bas dekhti hi rehti hoon

wo aainay mein bhi apnay hi raang chorr giya

aaina dekh kay boly – aaina poetry – besturdupoetry.pk

aaina dekh kay boly yeh sanwarny waly

ab tu bay-maut marain gy mujh pe marne waly

آئنہ دیکھ کے بولے یہ سنورنے والے

اب تو بے موت مریں گے، مُجھ پہ مرنے والے

aaina un say cheen laya hoon
aaina un say cheen laya hoon

آئنہ اُن سے چھین لایا ہوں

خود کو نظریں لگاتے رہتے ہیں

aaina un say cheen laya hoon

khud ko nazrain lagaty rehty han

dekhna achha nahi
dekhna achha nahi

دیکھنا اچھا نہیں زانو پہ رکھ کر آئنہ

دونوں نازک ہیں نہ رکھیو آئنے پر آئنہ

dekhna achha nahi zanu pay rakh kar aaina

dono nazak han na rakhyo ainy pay aaina

barra wasih hay us kay jamal ka manzar
barra wasih hay us kay jamal ka manzar

بڑا وسیع ہے اس کے جمال کا منظر

وہ آئینے میں تو بس مختصر سا رہتا ہے

فرحت احساس

barra wasih hay us kay jamal ka manzar

wo aainay main tu bas mukhtasir sa rehta hay

khubsorti poetry about sheesha

sanwarty haan wo aaina dekh kar
sanwarty haan wo aaina dekh kar

سنورتے ہیں وہ آئنہ دیکھ کر

سنور جائیں تو آئنہ دیکھتا ہے

sanwarty haan wo aaina dekh kar

sanwar jain tu aaina dekhta hay

aainay main wo dekh rahay thay
aainay main wo dekh rahay thay

آئنے میں وہ دیکھ رہے تھے بہارِحُسن

آیا میرا خیال تو شرما کے رہ گئے

aainay main wo dekh rahay thay bahar e husn

aya mera khayal tu sharma kay reh gaye

aaina hamain dekh kay heran sa kiyun hai
aaina hamain dekh kay heran sa kiyun hai

کیا کوئی نئی بات نظر آتی ہے ہم میں

آئینہ ہمیں دیکھ کے حیران سا کیوں ہے

kiya koi nai baat nazar aati hay ham main

aaina hamain dekh kay heran sa kiyun hai

ghamgeen poetry about mirror

tu apni shesha gari ka hunar na kar zaya - aaina poetry - besturdupoetry.pk
tu apni shesha gari ka hunar na kar zaya – aaina poetry – besturdupoetry.pk

تو اپنی شیشہ گری کا ہنر نہ کر ضا ئع

میں آئنیہ ہوں مجھے ٹوٹنے کی عادت ہے

tu apni shesha gari ka hunar na kar zaya

main aaina hoon mujhy tootnay ki aadat hay

aaina dekh kar tassalli hui
aaina dekh kar tassalli hui

آئنہ دیکھ کر تسلی ہوئی

ہم کو اس گھر میں جانتا ہے کوئی

aaina dekh kar tassalli hui

ham ko iss ghar main janta ha koi

aaina kehta hay kehna tu nahi chahiye tha
aaina kehta hay kehna tu nahi chahiye tha

آئنہ کہتا ہے ، کہنا تو نہیں چاہیےتھا

تو ابھی زندہ ہے ، رہنا تو نہیں چاہیے تھا

aaina kehta hay kehna tu nahi chahiye tha

tu abhi zinda ha, rehna tu nahi chahiye tha

aaina aab juda nahi karta
aaina aab juda nahi karta

آئنہ اب جدا نہیں کرتا

قید میں ہوں رہا نہیں کرتا

aaina aab juda nahi karta

qaid main hoon reha nahi karta

aaina poetry in urdu

umer bhar ham yunhi ghalti karty rahy
umer bhar ham yunhi ghalti karty rahy

عمر بھر ہم یونہی غلطی کرتے رہے غالب

دھول چہرے پہ تھی اور ہم آئینہ صاف کرتے رہے

umer bhar ham yunhi ghalti karty rahy ghalib

dhul chehry pay thi aur ham aaina saaf karty rahy

abhi shesha hoon
abhi shesha hoon

ابھی شیشہ ہوں سب کی آنکھوں میں چبھتا ہوں

جب آئینہ بنوں گا سارا جہان دیکھے گا

abhi shesha hoon sab ki aankhon main chubhta hoon

jab aaina banon ga sara jahan dekhy ga

aap bhi tu kabhi apna aaina saff kijye
aap bhi tu kabhi apna aaina saff kijye

مُجھ میں ہزار خامیاں ہیں معاف کیجیے

آپ بھی تو کبھی اپنا آئینہ صاف کیجیے

mujh main hazar khamiyan haan muaff kijye

aap bhi tu kabhi apna aaina saff kijye

main hansta hoon tu wo bhi khush rehta hay - aaina poetry in urdu
main hansta hoon tu wo bhi khush rehta hay – aaina poetry in urdu

میں ہنستا ہوں تو وہ بھی خوش رہتا ہے

تذکرہ آئینے کا کر رہا ہوں اِنسانوں کا نہیں

main hansta hoon tu wo bhi khush rehta hay

tazkara aainay ka kar raha hoon insanoon ka nahi

aaina dikha raha hoon patharon ko magar
aaina dikha raha hoon patharon ko magar

آئنہ دِکھا رہا ہوں پتھروں کو مگر

ہوتے ہی نہیں شرم سے پانی پانی

aaina dikha raha hoon patharon ko magar

hotay hi nahi sharam say pani pani

aaina dekh kar wo kehnay lagay aap hi aap
aaina dekh kar wo kehnay lagay aap hi aap

آئنہ دیکھ کر وہ کہنے لگے آپ ہی آپ

ایسے اچھوں کی کرے کوئی بُرائی کیونکر

aaina dekh kar wo kehnay lagay aap hi aap

aisay achon ki karay koi burai kiyun kar

aainay ki nazar na lag jaye
aainay ki nazar na lag jaye

آئینے کی نظر نہ لگ جائے

اِس طرح سے سنگھار مت کرنا

aainay ki nazar na lag jaye

iss tarah say singhar matt karna

read more

thanx for free image download

https://www.gettyimages.com/

https://www.pexels.com/

https://www.wallpaperflare.com/

https://www.ecopetit.cat/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge
%d bloggers like this: