aankhen bheeg jati hain lyrics – wasi shah

aankhen bheeg jati hain, poet name Wasi Shah.

A tremendously beautiful example of sad poetry

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تری آنکھوں کو پڑھتا ہوںتو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

وصی شاہ

aankhen bheeg jati hain ghazal lyrics by wasi shah

Samundar Mein Utarta Hon Tu Aankhain Bheg Jati Hain

Teri Aankhon Ko Parhtta Hon Tu Aankhen Bheeg Jati Hain

Tumhara Naam Likhnay Ki Ijazat Chhin Gayi Jab Sey
Koi Bhi Lafz Likhta Hoon Tu Ankhain Bheg Jati Hain

Teri Yadon Ki Khushbo Khirkiyun Mein Raqs Karti Ha
Teray Gham Mein Sulagta Hoon Tou Ankhain Bhig Jati Han

Na Janay Ho Gaya Hon Is Qadar Mai Hasas Kb Sey
Kisi Sey Bat Karta Hun Tou Ankhain Bheg Jati Han

Wo Sub Guzray Huwe Lamhat Mujh Ko Yad Aate Hain
Tumharey Khat Jo Parhta Hon To Ankhain Bheg Jati Han

Mai Sara Din Boht Masruf Rehta Hon Magar Junhi
Qadam Chokhat Pe Rakhta Hun To Ankhain Bheg Jati Han

Hr Ik Muflis Ke Mathe Pe Alam Ki Dastanin Hain
Koi Chehra Bhi Parhta Hoon To Ankhen Bhegg Jati Hain

Baray Logon Kay Onche Bad Numa Aur Sard Mehlon Ko
Ghareb Ankho Se takta Hoon tu Ankhain bheg Jati han

Terey Kuche Se Mera Talluq Ab Wajibi Sa Hy
Magar Jb Bhi Guzerta Hun To Ankhain Bheg Jati Han

Hazaron Mousamon Ki Hukmrani He Mere Dil Pay
Wasi Mai Jb Bhi Hansta Hun To aankhen bheeg jati hain

Wasi Shah

aankhen bheeg jati hain - wasi shah - besturdupoetry.pk
aankhen bheeg jati hain – wasi shah – besturdupoetry.pk

full ghazal lyrics urdu سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تری آنکھوں کو پڑھتا ہوںتو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھِن گئی جب سے

کوئی بھی لفظ لِکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تیری یادوں کی خُوشبو کھڑ کیوں میں رقص کرتی ہے

تیرے غم میں سُلگتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

نہ جانے ہو گیا ہوں اِس قدر میں حساس کب سے

کِسی سے بات کرتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

وہ سب گُزرے ہوئے لمحات مُجھ کو یاد آتے ہیں

تُمھارے خط جو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

میں سارا دِن بُہت مصروف رہتا ہوں، مگر جونہی

قدم چوکھٹ پہ رکھتا ہوں تو  تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

ہر اِک مُفلس کے ماتھے پہ اَلم کی داستانیں ہیں

کوئی چہرہ بھی پڑھتا ہوں ، تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

بڑے لوگوں کے اُنچے بدنُما اور سرد محلوں کو

غریب آنکھوں سے تکتا ہوں، تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

تیرے کوچے سے میرا تعلق اب واجبی سا ہے

مگر جب بھی گُزرتا ہوں، تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

ہزاروں موسموں کی حُکمرانی ہے میرے دِل پَر

وصی میں جب بھی ہنستا ہوں، تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

وصی شاہ

read more

Special thanks for free images download

https://unsplash.com

https://www.pexels.com/

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CommentLuv badge

%d bloggers like this: